’کپڑے بنانے والی اس کمپنی کا مالک مجھ سے ملا تو اس نے میرا سینہ پکڑلیا اور کہنے لگا کہ۔۔۔‘ معروف ماڈل نے ایسی شرمناک ترین بات بتادی کہ ہنگامہ برپاہوگیا

درجنوں اداکاراﺅں کی طرف سے ہالی ووڈ کے پروڈیوسر ہاروے ونسٹن پرجنسی ہراسگی کے الزامات عائد کیے جانے کے بعد سے دیگر اداکارائیں بھی خود کو جنسی طور پر ہراساں کیے جانے کی کہانیوں کے ساتھ سامنے آ رہی ہیں اور ان اداکاراﺅں کی فہرست سینکڑوں تک پہنچ چکی ہے۔ اب ان میں ایک اور اداکارہ کا اضافہ ہو گیا ہے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق یہ اداکارہ کیٹ اپٹن ہیں

جنہوں نے معروف فیشن ڈیزائنر پاﺅل مارسیانو پر انتہائی شرمناک الزام عائد کر دیا ہے۔ پچیس سالہ امریکی ماڈل و اداکارہ کا کہنا ہے کہ ”میں جب پہلی بار پاﺅل مارسیانو سے ملی تو وہ مجھے دیکھتے ہی میری طرف بڑھا اور آ کر میری چھاتی کو دونوں ہاتھوں سے پکڑ لیا۔ میں نے اسے پیچھے دھکیلا تو کہنے لگا کہ ’میں دیکھنا چاہتا ہوں کہ یہ اصلی ہیں یا نہیں۔‘ اس کے بعد اس نے زبردستی مجھ سے بوس وکنار کی کوشش کی اور میرے جسم کے پوشیدہ اعضاءکو چھوا۔“

کیٹ اپٹن نے ٹائم میگزین کو انٹرویو دیتے ہوئے مزید کہا کہ ”یہ واقعہ 2010ءمیں پیش آیا جب میری عمر 18سال تھی اور میں اپنی پہلی پروفیشنل ماڈلنگ کیمپین کے سیٹ پر تھی۔میں ’گیس لائنجری‘ (Guess Lingerie)کی ماڈلنگ کر رہی تھی جو گیس برانڈ کی معروف پراڈکٹ تھی اور مارسیانو اس برانڈ کے شریک بانی اور اعلیٰ عہدے پر ہونے کی وجہ سے سیٹ پر موجود تھے۔انہوں نے مجھے شوٹنگ کے بعد ملنے کو بھی کہا۔شوٹنگ کے دوران اس نے بار بار مجھے جنسی طور پر ہراساں کیا۔

کبھی میری رانوں پر ہاتھ مارتا اور کبھی میری کلائی یا کندھے سے پکڑ کر اپنے قریب کرنے کی کوشش کرتا۔حتیٰ کہ ایک بار اس نے مجھے گردن سے پکڑ کر بھی اپنے قریب لانے کی کوشش کی۔“رپورٹ کے مطابق مارسیانو کی طرف سے کیٹ کے ان الزامات کی سختی سے تردید کی گئی ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ ”کیٹ نے مجھ پر جو الزامات عائد کیے ہیں وہ بالکل جھوٹ اور انتہائی نامعقول ہیں۔میں کبھی کیٹ کے ساتھ تنہاءنہیں ہوا اور نہ کبھی اسے نامناسب انداز میں چھونے کی کوشش کی۔“

اپنا تبصرہ بھیجیں